مستقبل کی ممکنہ وزیراعظم ریحام خان ہزارہ وال نکلیں، تعلق مانسہرہ کے علاقےبفہ اور لغمانی خاندان سے ہے۔

اسلام آباد (سردار شہریار سے) تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کی نئی دلہن اور مستقبل کی ممکنہ وزیر اعظم ریحام خان ہزارہ وال نکلیں، ریحام خان کے والد ڈاکٹرنیررمضان کا تعلق ضلع مانسہرہ کی یونین کونسل بفہ سے تھا، تفصیلات کے مطابق معلوم ہوا ہے کہ مستقبل کی ممکنہ وزیراعظم اور تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کی نئی دلہن ریحام خان کا تعلق مانسہرہ سے ہے۔ بعض اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ ریحام خان کا تعلق سوات یا مردان سے ہے مگر گلیات ٹائمز کے تحقیق اور بعض دیگر ذرائع کے مطابق ریحام خان کا تعلق ہزارہ کے ضلع مانسہرہ سے ہے۔ ان کے والد نیررمضان مانسہرہ کی تحصیل بفہ کے رہائشی اور پیشے کے لحاظ سے ڈاکٹر تھے جو اپنی پیشہ وارانہ سلسلے میں پشاور اور بعد ازاں لیبیا میں بھی مقیم رہے لیبیا میں قیام کے دوران ان کے ہاں 4 اپریل 1974 کو ریحام خان کی پیدائش ہوئی۔بعض اطلاعات کے مطابق ریحام خان کی تاریخ پیدائش 3 اپریل 1973 ہے۔ ریحام خان کا تعلق بفہ کے لغمانی خاندان سے ہے جو سواتی خاندان کے نام سے بھی مشہور ہے۔ ذرائع کے مطابق ریحام خان صوبہ سرحد (خیبر پختونخوا) کے سابق چیف جسٹس اور جنرل ضیاء الحق کی طرف سے مارشل لاء کے نفاذ کے بعد بننے والے صوبائی گورنر عبدالحکیم خان کی بھتیجی ہیں۔ ریحام خان کی والدہ ہریپورکے علاقہ پنیاں سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر شیر بہادر خان کی بیٹی ہیں۔ ریحام خان کی پہلی شادی 23 جنوری 1992کو ڈاکٹر اعجاز ولد فضل الرحمان سکنہ گاندھیاں چٹی گٹی، مانسہرہ سے ہوئی، ڈاکٹر اعجاز، ریحام کے پھوپھی زاد تھے جن سے ان کے تین بچے ہوئے تاہم غلط فہمیوں کی وجہ سے2007 میں دونوں میں طلاق ہو گئی تھی، ریحام خان برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی پر موسم کا حال بتایا کرتی تھیں جس کے بعد انہوں نے کئی دیگر صحافتی اداروں میں بھی کام کیا اور2011 کے اوائل میں پاکستان منتقل ہو گئیں جہاں وہ آج ٹی وی پر بطور اینکر پرسن کام کرتی رہیں آج کل وہ ڈان ٹی وی کے ساتھ منسلک ہیں جو ان کے لئے مبارک ثابت ہوا ہے اور اب لوگ انہیں مستقبل میں ممکنہ طور پر پاکستان کی خاتون اول بلکہ وزیر اعظم تک بنتا ہوا دیکھ رہے ہیں۔

10888667_1396264474000754_3685999750977610350_n

Related posts

Leave a Comment