چراغ تلے اندھیرا، درجنوں منتخب نمائندوں کے باوجود چہڑھ تا کسالا روڈ خستہ حال، لوگ جیپوں پر سفر کرنے پر مجبور، اصلاح احوال کا مطالبہ

کسالا (نمائندہ گلیات ٹائمز) چراغ تلے اندھیرا، درجنوں لیڈروں اور منتخب نمائندوں کی موجود گی بھی علاقہ گلیات کی پسماندگی و درماندگی دور نہ کر سکی، گاؤں کسالا، کٹلیاں کروالا، تریڑی اور ہاڑی کھیتر اور ان سے ملحقہ دیگر دیہات کے ہزاروں نفوس پر مشتمل آبادی آج بھی سڑک کی خستہ حالی کی وجہ سے جیپوں پر جانوروں کی طرح سفر کرنے پر مجبور۔ کسا لا تا چہڑھ روڈ کشادہ کر کے پختہ کر دیا جائے توعلاقہ کے ہزاروں باسیوں کو سال کے بارہ مہینے بلا کسی تعطل و رکاوٹ آمدورفت کے ذرائع دستیاب رہیں گے۔ تفصیلات کے مطابق علاقہ گلیات سے تعلق رکھنے والی درجنوں شخصیات مختلف حکومتی ایوانوں میں موجود ہونے کے باوجود علاقہ کے کئی دیہات کی پسماندگی ودرماندگی ختم نہیں ہو سکی۔jeep.5jeep4. گلیات کے کئی علاقے حلقہ ااین اے اٹھارہ (سابقہ این اے بارہ) جو موجودہ وزیر اعظم پاکستان نواز شریف کا دو بار حلقہ انتخاب رہ چکا ہے،میں آتے ہیں، اسی حلقہ سے منتخب رکن اسمبلی مرتضیٰ جاوید عباسی، قومی اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر ہیں، جب کہ سابق ڈپٹی سپیکر سردار محمد یعقوب کا حلقہ انتخاب بھی یہی علاقہ ہے۔ سابق صوبائی وزیر بلدیات و موجودہ رکن صوبائی اسمبلی سردار محمد ادریس، خاتون رکن صوبائی اسمبلی آمنہ سردار، موجودہ سینیٹر و سابق رکن صوبائی اسمبلی، بیرسٹر جاوید عباسی، رکن صوبائی اسمبلی سردار اورنگزیب نلوٹھہ ، سابق ضلع ناظم، سردار حیدر زمان، موجودہ ضلع ناظم سردار شیر بہادر خان کے علاوہ ضلع و تحصیل کونسل کے سابق و موجودہ ارکان نے علاقہ کی ترقی و خوشحالی کو بری طرح نظر انداز کیا ہے جس کی زندہ مثال کسالا تا چہڑھ روڈ کا دس سے بارہ کلومیٹر طویل حصہ ہے،آج سے تیس سال قبل اس سڑک کا زیادہ تر حصہ عوام علاقہ نے اپنی مدد آپ کے تحت تعمیر کیا تھا اس کے بعد منتخب ہونے والے تمام ارکان قومی و صوبائی اسمبلی اور ضلع ناظمین جن میں سے اکثر کا تعلق اسی علاقہ سے ہے نے عوامی مشکلات و مطالبات کے باوجود اس سڑک کی حالت بہتر کرنے کی طرف کوئی توجہ نہیں دی۔ jeep2جس کی وجہ سے اس سڑک سے ملحقہ درجنوں دیہات کے ہزاروں باسی جیپوں پر جانوروں کی طرح سفر کرنے پر مجبور ہیں۔ عوامی دباؤ پر سردار اورنگزیب نلوٹھہ نے چہڑھ تا ہاری کھیتر تک سڑک کو کشادہ کر کے پختہ کرانے کا کام شروع کرا دیا ہے مگر ہاڑی کھیتر تا کسالا روڈ جو مذکورہ سڑک کو خراب ترین حصہ ہے پر کام کی کوئی شنید نہیں ہے۔ نام نہاد عوامی نمائندے زیلی سڑکوں پر کروڑوں روپے کے فنڈز دے رہے ہیں مگر چہڑھ تا کسالا روڈ جیسی مین سڑک کے کشادگی و پختگی کے لئے کوئی دلچسپی نہیں لے رہے۔ یہ سڑک خاص طور پر ہاڑی کھیتر تا کسالا سیکشن انتہائ خراب، خطرناک اور خستہ ترین حالت میں ہے جہاں سفر کے دوران اکثر ٹریفک حادثات اور ان کے نتیجے میں کئی اموات ہو چکی ہے۔ jeep.6 کسالا تا چہڑھ روڈ کی کشادگی و پختگی کی صورت میں یونین کونسل نگری بالا کے تمام باسیوں کو موسم سرما میں برفباری کی وجہ سے مین سڑکوں کی بندش کے دوران ایک متبادل راستہ میسر آ جائے گا۔ اس کے ساتھ چہڑھ تا کسالا روڈ سے ملحق درجنوں دیہات اور موضع جات کے باسیوں کو سفر کی بہتر سہولیات میسر ہو جائیں گی۔ عوام علاقہ نے ضلع ناظم سردارشیر بہادر، ڈپٹی سپیکر مرتضیٰ جاوید عباسی، ارکان صوبائی اسمبلی، سردار محمد ادریس، سردار اورنگزیب نلوٹھہ اور آمنہ سردار سے مطالبہ کیا ہے کہ اپنے اپنے ترقیاتی منصوبوں میں باڑاگلی تا چہڑھ روڈ کے ہاری کھیتر تا کسالا سیکشن کی کشادگی و پختگی کو اولین ترجیح دیں JEEP.1اور عوام علاقہ کی مشکلات و مصائب کم کرنے میں عملی کردار ادا کریں۔

Related posts

Leave a Comment